جوبلی ہلز قتل کیس کا معمہ حل ،مقتول کی بیوی اور آشنا گرفتار

   

حیدرآباد ۔ جوبلی ہلز پولیس نے محمد صدیق احمد کے قتل کیس میں ملوث اس کی بیوی اور آشنا کو گرفتار کرلیا۔ انسپکٹر جوبلی ہلز پولیس اسٹیشن راج شیکھر ریڈی نے بتایا کہ کوہیر کے ساکن 40 سالہ درزی صدیق احمد کی نعش یکم اپریل کو ان کے فلیٹ کے فریج سے دستیاب ہوئی تھی۔ پولیس نے تحقیقات کرتے ہوئے قتل کا مقدمہ درج کیا تھا اور شبہ کی بنیاد پر اس کی بیوی روبینہ کو حراست میں لے کر تفتیش کی جس میں معلوم ہوا کہ اس نے اپنے آشنا میکانک سید محمد علی ساکن بورہ بنڈہ کے ساتھ قتل منصوبہ بنایا تھا۔ پولیس نے بتایا کہ روبینہ نے محمد علی سے ناجائز تعلقات قائم کرلئے تھے اور اس نے بتایا تھا کہ اس کے شوہر کی جانب سے مسلسل ہراساں کیا جارہا ہے۔ منصوبہ کے تحت 28 مارچ کو روبینہ اپنے بچوں کے ہمراہ اپنے مائیکے چلی گئی جبکہ مقتول بھی اپنے سسرالی مکان میں رات کا کھانا کھاکر اپنے فلیٹ واپس آگیا۔ اسی رات روبینہ اپنے آشنا کے ساتھ فلیٹ پہنچی اور اسکرو ڈرائیور کے ذریعہ کھڑکی کی جالی کھول کر دونوں اندر داخل ہوئے اور صدیق کے سر پر اس وقت آہنی سلاخ سے حملہ کردیا جب وہ محوخواب تھا۔ قتل کرنے کے بعد مقتول کی نعش کو فریج میں چھپانے کی کوشش کی گئی لیکن وہ اس میں ناکام رہے اور مکان کو مقفل کرکے فرار ہوگئے۔ پولیس نے اس سلسلہ میں قتل میں استعمال کئے گئے آئینی راڈ اور دیگر اشیاء کو ضبط کرتے ہوئے دونوں کو گرفتار کرلیا۔

ADVERTISEMENT