دیہی علاقوں میں کائر ناریل ریشہ کی سڑکیں

   

127.88 کیلو میٹر سڑک کی تعمیر کی اجازت ، حکومت تلنگانہ کا فیصلہ
حیدرآباد۔4اگسٹ(سیاست نیوز) ریاستی حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ ریاست کے دیہی علاقوں میں ڈامبر کے بجائے کائر یعنی ناریل ریشہ کے استعمال سے سڑک کی تعمیر عمل میں لائی جائے۔ بتایاجاتا ہے کہ ریاستی حکومت کی جانب سے کئے گئے فیصلہ کے مطابق تلنگانہ کے دیہی علاقوں میں 127.88 کیلو میٹر کی کائر روڈ کی تعمیر کو منظوری دی گئی ہے جو کہ اب تک ڈامبر کی سڑک ہوا کرتی تھی۔سابق میں مرکزی حکومت کی جانب سے 105.8کیلو میٹر طویل کائر سڑک کی تعمیر کی مرکزی حکومت کی جانب سے اجازت فراہم کی گئی تھی ۔ تاحال صرف ملک کی چند ایک ریاستو ںمیں ہی اس سڑک کی تعمیر عمل میں لائی جا رہی ہے جو کہ زمین میں پانی کے جذب کرنے کے علاوہ مٹی کو مضبوط کرنے میں بے انتہاء معاون ثابت ہوتی ہے۔ جن ریاستو ںمیں ڈامبر کے بجائے کائر کی سڑکوں کی تعمیر عمل میں لائی جا رہی ہے ان میں مدھیہ پردیش ‘ تمل ناڈو‘ کیرالہ اور کرناٹک شامل ہیں۔ حکومت تلنگانہ نے مرکزی حکومت کی جانب سے اعلان کردہ اسکیم پرائم منسٹر گرام سڑک یوجنا کے تیسرے مرحلہ میں منظورہ سڑکوں میں کم از کم 5فیصد سڑکوں کو اس طرز پر تعمیر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔بتایاجاتا ہے کہ مرکزی حکومت کی جانب سے نیشنل کوالیٹی مانیٹر کے سروے کے دوران اس بات کا انکشاف ہوا ہے کہ ڈامبر کی تیار کردہ سڑک سے زیادہ بہتر کائر سے تیار کردہ سڑک ثابت ہورہا ہے اور اس کے استعمال سے مٹی میں بھی استحکام پیدا ہونے لگا ہے۔ اسی لئے دیہی علاقوں میں سڑک یوجنا کے تحت ناریل کے ریشہ سے تیار کی جانے والی سڑکوں کو فروغ دینے کے اقدامات کئے جا رہے ہیں۔