Wednesday , September 30 2020

سیکرٹریٹ مساجد مسمار کرنے کے ایک ماہ مکمل ہونے کے باوجود ٹی آر ایس حکومت نے اب تک کوئی کارروائی نہیں کی

سیکرٹریٹ مساجد مسمار کرنے کے ایک ماہ مکمل ہونے کے باوجود ٹی آر ایس حکومت نے اب تک کوئی کارروائی نہیں کی

حیدرآباد: 8 آگست (سیاست نیوز)

پرانی سکریٹریٹ عمارت کی تاریخی مساجد کو مسمار کرنے کے ایک ماہ کے بعد بھی ریاست کی جانب سے ابھی تک کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے۔ مسلم کمیونٹی میں بڑھتے ہوئے غم و غصے کے باوجود حکمران جماعت ٹی آر ایس لوگوں کے مذہبی جذبات کی خلاف ورزی پر غافل ہے۔

یہ مسمار ہائی کورٹ کے ساتھ ہی سپریم کورٹ نے 7 جولائی کو اس معاملے میں منظوری کے بعد شروع کیا گیا تھا۔ مساجد کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ ‘حکام نے انہیں مسجدوں میں مذہبی کتابیں اور نماز کے میٹ لینے باہر جانے سے پہلے ان کی اجازت نہیں لی تھی۔

مزید برآں مساجد کے معززین اور آئمہ کو اب بھی عمارت میں داخل ہونے کی اجازت نہیں ہے۔ روزنامہ سیاست کی خبر کے مطابق وقف بورڈ کو بھی مطلع نہیں کیا گیا۔

مساجد کے ساتھ ہی ایک مندر کو بھی ختم کردیا گیا ، تاہم مساجد کے برعکس مندر کا سارا سامان اور بت احتیاط سے محفوظ تھے۔

یہ دونوں مساجد 646.70 مربع گز میں پھیلی ہوئی تھیں۔ سکریٹریٹ کے اندر ایک مندر کو بھی نیچے اتارا گیا۔

کانگریس کے حزب اختلاف کے رہنماؤں نے اس ایکٹ پر تنقید کی تھی ، جبکہ بی جے پی رہنماؤں نے تلنگانہ کے وزیر اعلی سے کہا کہ بالکل اسی جگہ پر ایک اور مندر بنائیں۔ مسلم رہنماؤں نے بھی اپنا غصہ ظاہر کیا اور کہا کہ انہوں نے وزیراعلیٰ کو ’سیکولر‘ سمجھا ہے۔

آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کے سربراہ اسدالدین اویسی نے مساجد اور مندر کو منہدم کرنے کی مذمت کرتے ہوئے ٹھیکیدار کی گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT