Sunday , November 29 2020

قومی شہریت ترمیمی بل! ہندوستان کا مستقبل خطرے میں ہے ۔۔ پڑھیں ایک اہم رپورٹ

ریاستہائے متحدہ(امریکہ) کے ایک وفاقی کمیشن نے مشورہ دیا ہے کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کو وزیر داخلہ امت شاہ اور ہندوستان کے دیگر رہنماؤں پر پابندیاں عائد کرنے پر غور کرنا چاہئے، اگر وہ معاملہ آگے بڑھ جاتا ہے اور راجیہ سبھا کے ذریعہ بھی متنازعہ شہریت (ترمیمی) بل منظور کرلیا جاسکتا ہے۔

شہریت (ترمیمی) بل کو لوک سبھا کے میں منظور کیے جانے کے چند گھنٹوں بعد امریکی بین الاقوامی مذہبی آزادی (یو ایس سی آئی آر ایف) کے کمیشن نے کہا ہے کہ مجوزہ قانون ” تارکین وطن کے لئے شہریت کا راستہ ” خاص طور پر مسلمانوں کو خارج کرنے کےلیے کیا جا رہا ہے اور اس بل سے مذہب کی بنیاد پر نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

اس کمیشن نے اس خدشے کا اظہار کیا کہ حکومت ہند شہریت قانون مذہبی بنیاد پر تشکیل دے رہی ہے،جس سے ‘لاکھوں مسلمانوں سے شہریت ختم ہوجائے گی’۔ امریکی ہاؤس کی خارجہ امور کمیٹی نے بھی نئی دہلی میں وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت کی طرف سے اس بل کو پارلیمنٹ سے منظور کروانے کے اقدام پر تشویش کا اظہار کیا ، اور کہا ہے کہ ‘شہریت کے لئے کسی بھی مذہبی تعصب’ سے ‘ جمہوریت کے اصولوں کو نقصان پہنچے گا۔

یو ایس سی آئی آر ایف اور امریکی ہاؤس کی خارجہ امور کمیٹی کے سخت بیانات سے دونوں حکومتوں کے درمیان بات چیت سے قبل واشنگٹن کے ساتھ نئی دہلی کے تعلقات میں کچھ خرابی انے کا امکان ہے۔ وزیر خارجہ ایس جیشنکر اور وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ جلد ہی واشنگٹن کے سفر کا امکان ہیں۔ وہ 19 دسمبر کو امریکی وزیر خارجہ مائک پومپیو اور سکریٹری دفاع مارک ایسپر سے بات چیت کے لئے ملاقات کریں گے۔

لوک سبھا نے پیر کے دن شہریت ترمیمی بل کو منظور کیا۔

بھارتیہ جنتا پارٹی کی زیرقیادت حکومت اب متنازعہ قانون سازی کو راجیہ سبھا سے منظور کروانے کی تیاری میں ہے۔

واشنگٹن سے جاری ایک پریس ریلیز میں امریکی کمیشن برائے بین الاقوامی مذہبی آزادی (یو ایس سی آئی آر ایف) نے کہا ، “اگر سی اے بی پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں میں منظور ہوتا ہے تو ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی حکومت کو وزیر داخلہ اور دیگر اہم قیادت کے خلاف پابندیوں پر غور کر کرے گی۔

یو ایس سی آئی آر ایف ایک ‘آزاد دو طرفہ وفاقی حکومت کا ادارہ’ ہے جو امریکی کانگریس نے بیرون ملک مذہبی آزادی کو لاحق خطرات کی نگرانی تجزیہ اور ان کی اطلاع دینے کے لئے قائم کیا گیاتھا۔ اس نے امریکی صدر امریکی وزیر خارجہ اور امریکی کانگریس کو خارجہ پالیسی کی سفارشات مذہبی ظلم و ستم کو روکنے اور مذہب اور عقیدے کی آزادی کو فروغ دینے کو اپنے مقاصد میں شامل کیا۔

کمیشن نے کہا کہ اس بل کو مذہب کی کسوٹی کے پیش نظر سی سخت پریشانی کا سامنا ہو سکتا ہے،جسے اصل میں وزیر داخلہ امت شاہ نے لوک سبھا میں پیش کیا تھا۔

یو ایس سی آئی آر ایف نے کہا کہ سی اے بی ‘ملک کےلیے انتہائی خطرناک موڑ ہے، جو ‘ہندوستان کے سیکولرازم اور آئین کے خلاف ہے ۔

 یو ایس سی آئی آر ایف نے کہا۔ آسام میں جاری قومی رجسٹر آف سٹیزن (NRC) عمل اور ملک گیر NRC کے ساتھ مل کر جو وزیر داخلہ نے تجویز کرنا چاہتے ہیں اس سے خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ ہندوستان غلط رخ اختیار کرے گا۔

امریکہ اور ہندوستان اس چیز میں مشترک ہے کہ یہاں پر مختلف مذاہب کے لوگ رہتے ہیں، شہریت کےلیے کسی بھی ایسے قانون کو پاس کرانا ٹھیک نہیں ہے جس سے کسی ایک مذہب والوں کے ساتھ نا انصافی ہو۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT