Monday , September 16 2019

مودی حکومت کے خلاف کسانوں کا سر منڈوا کر احتجاج

حصار: سوامی ناتھن کمیشن کی رپورٹ کے نفاذ، کسانوں کے قرض معافی سمیت متعدد مطالبوں کے سلسلے میں تحریک چلارہے کسانون نے آج اجتماعی طور سے سے سر منڈواکر حکومت کے خلاف اپنے اشتعال کا اظہار کیا۔

مختلف مطالبوں کے سلسلے میں نئی کورٹ، ہانسی کے سامنے کسانوں کا دھرنا آج 23ویں دن بھی جاری ہے۔ وہیں کسان لیڈر سریش کوتھا نے اپنے تامرگ بھوک ہڑتال 11 ویں دن بھی جاری رکھی۔ دھرنے کے دوران حکومت کی کسان مخالف پالیسیوں کے خلاف ناراض ہوکر کپور سنگھ کھوکھا، رمیش کھرڑ، دلیپ ڈھنڈیری، گلاب کھڑکری سمیت دیگر کسانوں نے اجتماعی طور سے سرمنڈواکر اپنی مخالفت کا اظہار کیا۔

دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے کسان لیڈروں نے کہا کہ حکومت ایک طرف تو کسان حامی ہونے کا دکھاوا کررہی ہے وہیں دوسری طرف اپنی جائز مطالبوں کے سلسلے میں کسان گزشتہ 23 دنوں سے دھرنا کرکے کر اپنی مخالفت کا اظہار کررہی ہے لیکن حکومت نے ابھی تک کسی بھی طرح کی پہل نہیں کی ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ مودی حکومت کبھی کسانوں کی پنشن شروع کرنے تو کبھی فی ایکڑ معاوضہ دینے کی بات کر کے کسانوں کو گمراہ کر رہی ہے۔

بھارتیہ کسان یونین کے ترجمان وکاس سیسر نے بتایا کہ دھرنے پر تامرگ بھوک ہڑتال کررہے کسان لیڈر سریش کوتھا کی حالت مسلسل خراب ہوتی جارہی ہے ، ان کا وزن پندرہ کلو تک کم ہوگیا ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT